25 Aug, 2019 | 23 Dhul Hijjah, 1440 AH

Question #: 2333

December 17, 2018

assalamualikum hazrat aapke website per masla padha ke baap beti se zina karle toa baap ka nijah toot jata hai biwi haram hojati hai.toa aisa hi ek waqia mere ek azeez dost na sunaya ka ek ladki ko uska walid ne zina kiya aur us waqt wo ladki nabalig thi aur musalsal kaee saal 5-8 saal karta raha aur uswaqt.aur LADKI BALIG HONE ke baad bhi wo baap beti ke kamre ma aata aur uske side ma sokar badfali karta.ladki ku pahli baar aisa dikha jaisa ke khwab hai but dekha toa walid haqeeqat ma bagal ma sokar tha. ab jab ladki ku malum bhi hota tha per ghar toot jayega isliye uska family members ku aur mother ku nahi boli halanki wo bhi shahwat mahsoos krti thi 2-3 baar khudkhushi ki koshish kari ladki but bach gayi.ab dono me kon zyada gunahgaar hai.ladki kahrahi hai ke wo majboor thi bebas thi.madarsa padhti thi .ab uski age 23 saal hai. hazrat puri family abhi bhi milkar rahti hai.us baap ko saza sharan kya hai.ladki touba karna chahti hai.kya is ma ladki bhi gunhgaar hai ladki us waqt apni walida ko bata dena chahiye tha.kya walid ke liye touba ka tariqa .ladki ke liye touba ka tariqa kya hai ladki ghar chod de .aur us baap ki sharan duya ma saza kaisa de .plz jaldi jawab dijiye ladki allah ki zaat se na ummed hai ki touba qubool nahi hogi.walid abhi bhi galat bad fali karne ki koshish karta rahta lekin ladki badi hogai 23years ki isliye bachri.aise ladki ko koi nikah karke sahara de us ladke ko kya ajr denge allah.

Answer #: 2333

السلام علیکم! حضرت آپ کی ویب سائٹ پر ایک مسئلہ پڑھا ہے، باپ بیٹی سے زنا کر لے تو باپ کا نکاح ٹوٹ جاتا ہے،  بیوی حرام ہو جاتی ہے، تو ایسا ہی ایک واقعہ میرےایک عزیز دوست نے سنایا کہ ایک لڑکی سے اس کے والد نے زنا کیا اور اس وقت وہ لڑکی نابالغ تھی اور مسلسل 5-8 سال تک کرتا رہا۔ اور لڑکی کے بالغ ہونے کے بعد بھی وہ باپ بیٹی کے کمرے میں آتا اور اس کے پہلے میں سو کر بد فعلی کرتا۔ اس لڑکی کوپہل دفعہ ایسے معلوم ہوتا جیسے کہ خواب ہےمگر دیکھا تو حقیقت میں والد صاحب پہلو میں سو رہے تھے۔ اب لڑکی کو معلوم بھی ہوتا تھا مگر وہ گھر ٹوٹ جانے کے ڈر سے گھر والوں اور امی کو نہیں بتاتی تھی حالانکہ وہ بھی شہوت محسوس کرتی تھی۔لڑکی نے دو تین بار خود کشی کی کوشش کی مگر بچ گئی۔ اب دونوں میں کون زیادہ گنہگار ہے؟ لڑکی کہہ رہی ہے وہ مجبور تھی بے بس تھی، مدرسہ پڑھتی تھی۔ اب اس کی عمر 23 سال ہے۔ حضرت پوری فیملی اب بھی مل کر رہتی ہے۔

1- اس باپ کو اب شرعاً کیا  سزا ہے؟

2- لڑکی توبہ کرنا چاہتی ہے۔کیا اس میں لڑکی بھی گنہگار ہے؟

3 -  کیا لڑکی کو اس وقت اپنی والدہ کو بتا دینا چاہیے تھا؟

4 -  لڑکی اور والد کے لیے توبہ کا کیا طریقہ ہے؟

5-  لڑکی گھر چھوڑ دے۔

6- لڑکی اللہ کی ذات سے ناامید ہےکہ توبہ قبول نہیں ہوگی، والد ابھی بھی بد فعلی کرنے کی کوشش کرتا رہتا ہے لیکن لڑکی بڑی ہوگئی ہے 23 سال کی اس لیے بچ رہی ہے۔ اب جو لڑکا ایسی لڑکی کو نکاح کر کے سہارا دے اسے اللہ کیا اجر دے گا؟

براہ مہربانی جلدی جواب دیجیے۔

الجواب حامدا ومصلیا

اپنی بیٹی کے ساتھ زنا کرنا ،انتہائی گھناؤنا، انسانیت سے بعید اور حد درجہ نفرت کے لائق  فعل ہے، اگر اسلامی حکومت میں اس کا یہ جرم ثابت ہوجاتا تو اسے سنگسار کرکے دنیا کو ایسے حیوان صفت انسان سے پاک کردیا جاتا، کوئی بھی انسانی ضمیر رکھنے والا شخص ایسے کام کے ارتکاب کا تصور تک نہیں کرسکتا۔

اپنی بیٹی کے ساتھ زنا کرنے سے بیوی ہمیشہ کے لیے اپنے شوہر پر حرام ہوجاتی  ہے، اب اسے بیوی کے ساتھ رہنا جائز نہیں ہوتا۔

 1-  شریعت  نے زنا کی سزا بہت  ہی سخت  مقرر کی ہے اور اس سزا کو جاری کرنے کا حق صرف حکومت اور عدالت کو ہے، عوام کے لیے کسی کو زنا کی سزا دینا جائز نہیں ہے۔

2-  جی ! لڑکی کو بھی گناہ ہو گا۔

3- جی! لڑکی کو اس وقت اپنی والدہ کو بتا دینا چاہیے تھا۔

4- لڑکی اور والد کے لیے توبہ کا  طریقہ وہی ہے جو دیگر گناہوں سے توبہ کرنے کا ہے کہ وہ دونوں سچے دل سے اللہ تعالیٰ سے  توبہ کریں اور آئندہ اس گناہ سے مکمل طور پر  بچیں۔

5۔ لڑکی کو گھر نہیں چھوڑنا چاہیے ، بلکہ اپنی والدہ کو بتا دینا چاہیے ۔

6-  جولڑکا ایسی لڑکی کو نکاح کر کے سہارا دے اسے اللہ ضرور اجر دے گا۔

والله اعلم بالصواب

احقرمحمد ابوبکر صدیق  غفراللہ لہ

دارالافتاء ، معہد الفقیر الاسلامی، جھنگ

۲۱ ؍ جمادی الأول ؍ ۱۴۴۰ھ

28‏ ؍ جنوری ؍  2019ء