16 Jun, 2019 | 12 Shawwal, 1440 AH

Question #: 2326

December 10, 2018

Asa. . . Hazrat . . . Wo ksi ny kha he k sheeshy k samny nimaz ni hti mtlb agr kamry me sheesha lga hoa he r wo side pe ata he ya samny to wo toninsaan ka aks hta he na k tasveer. . . Us k samny nimaz parh skty hen??? Ya ni???

Answer #: 2326

الجواب حامدا ومصلیا

نماز کو  خشوع  خضوع اور توجہ سے پڑھنا مطلوب ہے۔   اور نماز کے اندر ہر ایسے کام سے بچنا چاہیے کہ جس سے خشوع و خضوع ختم ہوتا ہو یا متاثر ہوتا ہو۔ لہذا آئینہ کے سامنے نمازپڑھناجائزہے البتہ اگراسکی وجہ سے خشوع وخضوع میں خلل واقع ہورہاہوتوآئینے کے سامنے نمازپڑھنامکروہ ہوگا۔ اور آئینہ کے سامنے نماز پڑھنے کی عادت نہ بنائی جائے۔ بصورتِ مجبوری اس پر کوئی کپڑا ڈال دیا جائے، البتہ شیشہ سائڈ پر ہو تو اس میں کوئی حرج نہیں۔

فی مراقي الفلاح (ص: 154)

( و ) تكره بحضرة كل ( ما يشغل البال ) كزينة ( و ) بحضرة ما ( يخل بالخشوع ) كلهو ولعب ولذا نهى النبي صلى الله عليه و سلم عن الإتيان للصلاة سعيا بالهرولة ولم يكن ذلك مرادا بالأمر بالسعي للجمعة بل الذهاب والسكينة والوقار.

والله اعلم بالصواب

احقرمحمد ابوبکر صدیق  غفراللہ لہ

دارالافتاء ، معہد الفقیر الاسلامی، جھنگ

‏06‏ ربیع الثانی‏، 1440ھ

‏15‏ دسمبر‏، 2018ء