04 Apr, 2020 | 10 Shaban, 1441 AH

Question #: 2551

January 23, 2020

Asak wr wb emahad , My daughters quran teacher teaching online working under academy she asked for help to refer her and tell if i know some students who want to learn quran she want to personally teach quran as she gets less payment from that academy she said later she have own academy too she teaches too and this is known by academy that she teaches some other students personally online and at home ..i have helped her with 2 students giving her id and she is teaching now alhamdulillah But my husband and friends says that it is not correct way she should not ask help from academy students and can ask others not from academy for help to get other students and said academy should be aware of this .. i would like to know if teacher is wrong in doing so is it haram for her to ask for help and i have helped her and if iam participating with her and also gunahgar. Is it like teacher and we are haq marrai academy walo ka ? And if we both are gunahgar? ..plz mention if gunahgar what to do ..plz wazahat karein.. waiting for ur reply I dont know how to write in urdu so writing in english .. Thanks for ur precious time and help Jazakumullah khairan katheera ..

Answer #: 2551

السلام علیکم ورحمۃ اللہ وبرکاتہ! اکیڈمی کے تحت کام کرنے والی میری بیٹی کی قرآن  ٹیچر نے میری بیٹی سے مدد طلب کی ہے  کہ وہ میری راہنمائی کریں اور بتائیں کہ کیا میں کچھ ایسے طالب علموں کو جانتی ہوں جو قرآن سیکھنا چاہتی ہیں وہ ذاتی طور پر قرآن کی تعلیم دینا چاہتی ہیں کیونکہ اسے اکیڈمی سے کم ادائیگی ملتی ہے۔ اس نے بعد میں کہا کہ اس کی اپنی اکیڈمی بھی ہے وہ بھی پڑھاتی ہیں اور یہ اکیڈمی کے ذریعے معلوم ہوا ہے کہ وہ کچھ اور طالب علموں کو ذاتی طور پر آن لائن اور گھر میں پڑھاتی ہیں۔ میں نے 2 طلباء دے کر انکی مدد کی ہے اور وہ اب الحمد اللہ پڑھا رہی ہیں۔ لیکن میرے شوہر اور دوست کہتے ہیں کہ یہ درست طریقہ نہیں ہے کہ وہ اکیڈمی کے طلباء سے مدد طلب کرے۔  وہ دوسرے طالب علموں کو حاصل کرنے کے لئے اکیڈمی کے علاوہ  دوسروں سے مدد طلب کرسکتی ہیں اور کہا کہ اکیڈمی کو اس سے آگاہ ہونا چاہئے۔

میں یہ جاننا چاہتی ہوں کہ: اگر ٹیچر ایسا کرنے میں غلط ہے تو کیا ان کے لئے مدد مانگنا حرام ہے اور میں نے ان کی مدد کی ہے تو کیا میں بھی ان کے ساتھ شریک ہوں اور گناہ گار ہوں جیسے یہ ٹیچر ہیں۔ اور کیا ہم نے اکیڈمی والوں کا حق مارا ہے؟ اور اگر ہم دونوں ہی گنہگار ہیں تو برائے کرم وضاحت کریں کہ ہمیں کیا کرنا چاہیے؟  

الجواب حامدا ومصلیا

کسی کو  آن لائن پڑھنے کے لیے   طلبہ تلاش کرنے کا کہنا  ناجائزاور حرام نہیں ہے، بلکہ مباح اور جائز کام ہے۔ اور اس پر کسی کی مدد کرنا بھی جائز ہے۔

والله اعلم بالصواب

احقرمحمد ابوبکر صدیق  غَفَرَاللّٰہُ لَہٗ

دارالافتاء ، معہد الفقیر الاسلامی، جھنگ

‏09‏ جمادى الثانی‏، 1441ھ

‏04‏ فروری‏، 2020ء