15 Nov, 2018 | 6 Rabiul Awal, 1440 AH

Question #: 2263

August 07, 2018

Asa. . . Mufti sb me ny ye pochna he k ye jo aamil hzrat hty hen himsab lga kr btaty hen kksi b masly k liye kia ye darust he?? Like agr in sy ye pochen k shadi ki bandish to ni waghera waghera. . . Ksi ny mujh sy kha he k me ny tmara hisab lgya he us me lrki ka name r walda ka name pochty r khty k ap k rishtay ki bandish he. . . I am worried about that. . . Me ny hal pocha to kha k taweez lena pry ga apko. . mufti sb kia ye baat darust he aisa kuch hta he?? Mtlb ye bandish waghera kia cheez he??? Or is ka hal Quraan o Sunnat sy kia he ? Agr ye baat darust he. . Plz rahnumai frma dijye

Answer #: 2263

الجواب حامدا ومصلیا

              اگر عامل (عملیات کرنے والا شخص) متبعِ شریعت (شریعت کا پابند) ہے، بذریعۂ عملیات کسی کو دھوکہ نہیں دیتا ہے، ا س سے علاج کرانے میں فسادِ عقیدہ  بھی نہیں ہے، تو فی نفسہٖ اس سے علاج کرالینے کی گنجائش ہے، لیکن اِس جہاں میں ٹھگوں اور دھوکہ دِہَندوں کی بھی کمی نہیں، اس لیے ان سے ہوشیار رہنے کی بھی ضرورت ہے۔ اور پریشانی کی کوئی بات نہیں۔

             وفي ’’ مرقاۃ المفاتیح ‘‘ : وعن عوف بن مالک الأشجعي قال : کنا نرقی في الجاہلیۃ ، فقلنا : یا  رسول صلی اللہ علیہ وسلم للّٰہ ! کیف تری في ذلک ؟ فقال : ’’ اعرضوا علي رقاکم ، لا بأس بالرقی ما لم یکن فیہ شرک ‘‘ ۔ رواہ مسلم ۔ قال الشیخ الملا علي القاري رحمہ اللّٰہ تعالی : ’’ ان الرقی یکرہ منہا ما کان بغیر اللسان العربي ، وبغیر أسماء اللّٰہ تعالی ، وصفاتہ وکلامہ في کتبہ المنزّلۃ ، وإن اعتقد أن الرقیۃ نافعۃ لا محالۃ فیتکل علیہا وإیاہا ‘(۸/۳۵۸ ، ۳۵۹ ، کتاب الطب والرقی.

            وفي ’’ فتح الباري ‘‘ : وقد أجمع العلماء علی جواز الرقیۃ عند اجتماع ثلاثۃ شروط : أن یکون بکلام اللّٰہ تعالی ، أو بأسمائہ ، وصفاتہ ، وباللسان العربي ، أو بما یعرف معناہ من غیرہ، وأن یعتقد أن الرقیۃ لا تؤثر بذاتہا بل بذات اللّٰہ تعالی . (۱۰/۲۴۰ ، کتاب الطب ، باب الرقی بالقرآن والمعوذات)

                وفي ’’ رد المحتار ‘‘ : قالوا : وإنما تکرہ العوذۃ إذا کانت لغیر لسان العرب ولا یدري ما ہو،  ولعلہ یدخلہ سحر أو کفر أو غیر ذلک ، وأما ما کان من القرآن أو شيء من الدعوات فلا بأس بہ. (۹/۵۲۳ ، کتاب الحظر والإباحۃ، فصل في اللبس، ط : دار الکتب العلمیۃ بیروت :۶/۳۶۳ )

والله اعلم بالصواب

احقرمحمد ابوبکر صدیق  غفراللہ لہ

دارالافتاء ، معہد الفقیر الاسلامی، جھنگ

‏25‏ ذو الحجّہ‏، 1439ھ

‏06‏ ستمبر‏، 2018ء