29 Jan, 2023 | 7 Rajab, 1444 AH

Question #: 3050

November 24, 2022

Assalam o Alaikum wrwb Hazrat mery 2 bachay hai,ak 15 mah ka beta hai or 3 saal ki beti hai, dono operation say huy hai. Ab meri wife phir se pregnant hai, lakn uski jismani halat blkul theek nahe, har waqt bemar rehti hai, or ghar mai bhi akaili hai koi bhi sath nahe bacho ko sambhalne ke lye.. wo is surat mai hamal nahe rakhna chahti jab ke ab uske hamal ka ibtidai maheena hai... Is surat mai agar wo hamal giraye to shariat ka kia hukam hai. Gunah hoga ya nahe? Jazak ALLAH

Answer #: 3050

الجواب حامدا ومصلیا

اگر حمل سے عورت کی جان کو خطرہ  ہو یا کسی شدید نقصان  کا اندیشہ ہو ، یا  حمل سے عورت کا دودھ بند ہوجائے جس  سے پہلے بچہ کو نقصان ہو   اور کوئی  تجربہ کار مستند خدا ترس  ڈاکٹر اس کی تصدیق کرتا ہو   تو اس جیسے اعذار کی بنا  پر  حمل میں روح پڑجانے سے پہلے   پہلے (جس کی مدت تقریباً چار ماہ ہے)    اسے ساقط کرنے کی گنجائش ہے، اور چار ماہ کے بعد کسی صورت میں اسقاط حمل جائزنہیں ہے، اور  شدید عذر نہ ہو تو پھر  حمل کو ساقط کرنا   کسی بھی وقت جائز نہیں ہے، بلکہ بڑا گناہ ہے۔

والله اعلم بالصواب

احقرمحمد ابوبکر صدیق غَفَرَاللہُ لَہٗ

دارالافتاء ، معہد الفقیر الاسلامی، جھنگ