24 Sep, 2018 | 13 Muharram, 1440 AH

Assalam o alikum Mein apne husband k sath italy me rehti hon... meri beti italy mein hue hai..yahan delivery male doctors karte hain..Hospitals wale pehle hi bata dete hain k male ja female jo Doctor available ho ga woe delivery kare ga...meri delivery male doctor ne kiya thi.. mujhy ye pochna hai k ye jaiz hai??

الجواب حامدا و مصلیا

 جب کوئی  ایسی لیڈی ڈاکٹر میسر    ہو کہ جس سے تسلی بخش  ڈیلیوری ہوسکے ،  تو لیڈی ڈکٹر ہی سے ڈیلیوری کرانا ضروری ہےاور اس صورت میں مرد ڈاکٹر سے ڈیلیوری کرانا جائز نہیں ہے۔ اگر کوئی ایسی  لیڈی ڈاکٹر میسر نہ ہوتو بوقت ضرورت بامر مجبوری   مرد سے  ڈیلیوری کرانے کی گنجائش ہے۔

الفتاوى الهندية (5/ 330)

امرأة أصابتها قرحة في موضع لا يحل للرجل أن ينظر إليه لا يحل أن ينظر إليها لكن تعلم امرأة تداويها فإن لم يجدوا امرأة تداويها ولا امرأة تتعلم ذلك إذا علمت وخيف عليها البلاء أو الوجع أو الهلاك فإنه يستر منها كل شيء إلا موضع تلك القرحة ثم يداويها الرجل ويغض بصره ما استطاع إلا عن ذلك الموضع ولا فرق في هذا بين ذوات المحارم وغيرهن لأن النظر إلى العورة لا يحل بسبب المحرمية.

والله اعلم بالصواب

احقرمحمد ابوبکر صدیق  غفراللہ لہ

دارالافتاء ، معہد الفقیر الاسلامی، جھنگ

‏02‏ محرّم‏، 1440ھ

‏13‏ ستمبر‏، 2018ء