19 Oct, 2019 | 19 Safar, 1441 AH

Question #: 2494

September 08, 2019

Assalam o Alaikum Sheikh Sahib... Aik banda agar kisi ke leye haraab niyyat rakke (jaisa ke ye banda mujh se dunyavi ilam hasil na kare) ya kisi ke samne takabbur ke bol bole ghair ihteyati taor par to iska kaffara kaise hoga? ye gunah kaise hatam hosaken ge? aur agar insan ko ye mehsoos ho raha ho ke meri niyyat ki wajah se aur takabbur ke bol bolne se ALLAH ne mujhe pakkar liya hai, to halaat ko kaise sudhaara jaye aur ALLAH ko kaise razi kiya jaye??? JazakALLAH

Answer #: 2494

السلام  علیکم شیخ صاحبِ . . . ایک بندہ اگر کسی كے لئے خراب  نیت رکھے ( جیسا كہ یہ بندہ مجھ سے دنیاوی علم حاصل نہ کرے ) یا کسی كے سامنے تکبر كے بول بولے غیر احتیاطی طور  پر تو اس کا کفارہ کیسے  ہوگا ؟ یہ گناہ کیسے ختم  ہو سکیں گے ؟ اور اگر انسان کو یہ محسوس ہو رہا ہو كہ میری نیت کی وجہ سے اور تکبر كے بول بولنے سے اللہ نے مجھے پکڑ لیا ہے،  تو حالات کو کیسے سدحارا جائے اور اللہ کو کیسے راضی کیا جائے ؟ ؟ ؟ جزاک اللہ

الجواب حامدا ومصلیا

سب سے پہلے کسی كے سامنے تکبر كے بول بولنے  پر اللہ  تعالیٰ سے توبہ و استغفار کرے، اور آئندہ اس قسم کے اور بول اور تکبرانہ لہجہ اور گفتگو سے مکمل اجتناب کرے۔ مزید اگر کسی اللہ والے کے ہاتھ پر بیعت ہوجائے  اور پابندی کے ساتھ رابطہ رکھے تو تمام  حالات صحیح ہوجائیں گے۔

والله اعلم بالصواب

احقرمحمد ابوبکر صدیق  غَفَرَاللّٰہُ لَہٗ

دارالافتاء ، معہد الفقیر الاسلامی، جھنگ

‏23‏ محرم الحرام‏، 1441ھ

‏23‏ ستمبر‏، 2019ء